Jump to content
CooLYar Forums - A Friendly Community by CooLYar
  • entries
    17
  • comments
    3
  • views
    20,862

Maa...!

Sign in to follow this  
Emaad

486 views

تم تھے تو زندگی کی حاصل تھی ہر رعنائی

اب میں ہوں اور بس میری یہ تنہائی

تیرے دو ہاتھ ہی اُٹھتے تھے دعاؤں کیلیے

اب تو خونِ دل ہوا اور آواز تلک نہ آئی

بند آنکھوں سے دیکھا جو تیرا حسیں چہرہ

جانے کیوں تیری آنکھوں میں ویرانی پائی

کچھ خواب تھے تیری ویران آنکھوں میں

جانے تعبیر سے پہلے کیوں زندگی نے کی بیوفائی

سختیوں کے سبھی موسم اکیلے برداشت کیے

گلشن چھوڑ دیا تو نے جب اُمیدِ بہار آئی

پورا نشیمن بکھر گیا تیرے بعد کچھ اس طرح سے

دکھایا اثر اپنوں نے اور کچھ تیز طوفاں آئے

اب شکوہ کسی سے کیا کرنا اے ناز

جانے والے جاتے ہیں مجبور ہیں اور کوئی ہرجائی

Source: Maa...!

Sign in to follow this  


0 Comments


Recommended Comments

There are no comments to display.

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now
×

Important Information

We have placed cookies on your device to help make this website better. You can adjust your cookie settings, otherwise we'll assume you're okay to continue.