Jump to content
CooLYar Forums - A Friendly Community by CooLYar
Zaini

Write A Shair Daily

Recommended Posts

دل ہی تو ہے نہ سنگ و خشت، درد سے بھر نہ آئے کیوں

روئیں گے ہم ہزار بار، کوئی ہمیں ستائے کیوں...

Share this post


Link to post
Share on other sites

ﺑﺰﻡ ﮐﯽ ﺭﻭﻧﻘﯿﮟ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﺗﮭﯿﮟ۔۔۔۔۔۔۔۔!!

ﮨﻢ ﻧﺎ ﺍﭨﮭﺘﮯ ﺗﻮ ﺍﭨﮭﺎﺋﮯ ﺟﺎﺗﮯ۔۔۔۔۔۔ !!

Share this post


Link to post
Share on other sites

وہ جو اک شخص مجھے طعنہء جاں دیتا ہے

مرنے لگتا ہوں تو مرنے بھی کہاں دیتا ہے

تم جسے آگ کا تریاق ____ سمجھ لیتے ہو

دینے لگ جائے تو پانی بھی دھواں دیتا ہے

Share this post


Link to post
Share on other sites

میں نے لمحوں میں صدیوں کی اذیت پائی هے...!!

اپنے احساس کو رشتوں کے حوالے کر کے..!!!

Share this post


Link to post
Share on other sites

اب تو "مٹی" کے سوا کوئی "خریدار" نہیں ،،،

تو نے "قیمت" ہی گرا دی میری "پیشانی" کی...

Share this post


Link to post
Share on other sites

ﺍُﺱ ﻧﮯ ﺍﮔــــــَﺮ ﮨﺎﺗﮫ ﭼُﮭـــــــﮍﺍﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﺭﺍﺩﮦ ﺑﺎﻧﺪﮬﺎ

ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺟﯿﻨﮯ ﮐــــﯽ ﺍَﺫﯾﺖ ﺳﮯ ﻣــــــــُﮑﺮ ﺟﺎﻧﺎ ﮨﮯ..

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

ﺫﺭﺍ ﺩﻭﺭ ﺭﮦ، ﻣﺮﮮ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻧﺠﺎﻧﮯ ﮐﯿﻮﮞ
ﺍﺑﮭﯽ ﮨﺎﺗﮫ ﺩﮬﻮ ﮐﮯ ﭘﮍﯼ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯿﮟ ﺍُﺩﺍﺳﯿﺎﮞ

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

میں جو تنہا رہ طلب میں چلا
ایک سایہ مرے عقب میں چلا

صبح کے قافلوں سے نبھ نہ سکی
میں اکیلا سواد شب میں چلا

جب گھنے جنگلوں کی صف آئی
ایک تارا مرے عقب میں چلا

آگے آگے کوئی بگولا سا
عالم مستی و طرب میں چلا

میں کبھی حیرت طلب میں رکا
اور کبھی شدت غضب میں چلا

نہیں کھلتا کہ کون شخص ہوں میں
اور کس شخص کی طلب میں چلا

ایک انجان ذات کی جانب
الغرض میں بڑے تعب میں چلا

 
     
 
 
 
   
 
 

Share this post


Link to post
Share on other sites

لکیریں ہاتھ کی دیکھیں تو ہو گیا خاموش..
فقیر نے میرے چہرے پہ دم کیا ہی نہیں ..

تمہارے ساتھ نہیں, یہ ہماری عادت ہے..
 
:noprob:کسی سے پیار کیا ہے تو کم کیا ہی نہیں ..

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

روز افتاد نئی دل پہ گزر تی ہے مگر 
روز کے روز یہ قصے نہیں لکھے جاتے

Share this post


Link to post
Share on other sites

☜ایک شخص جو کبھی

خیالوں سے نہیں اترا تھا

☜دل سے اتر گیا !!

Share this post


Link to post
Share on other sites

کسی بھی روز مجھے دل سزا سنا دے گا 
میں خواہشوں کا بہت قتلِ عام کرتا ہوں

Share this post


Link to post
Share on other sites

وہ ترا اونچی حویلی کے قفس میں رہنا..
یاد آئے تو پرندوں کو رہا کرتا ہوں ...!!

Share this post


Link to post
Share on other sites

تیری بھیگی ہوئی زلفوں کےتقدس کی قسم
توجہاں بال نچوڑےوھاں میخانہ بنے

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now



×