Jump to content
CooLYar Forums - A Friendly Community by CooLYar
Sign in to follow this  
shy

زندگی سے عا&#158

Recommended Posts

موسم بدل گیا تھا۔۔۔ خشک ہوا کے ساتھ ڈھیروں ڈھیر پتے بکھرتے اور سرِ شام ہی اندھیرا چھا جاتا۔۔۔ آسمان پر ہمہ وقت ایک غبار سا چھایا رہتا جس میں نقل مکانی کرتے پرندے دکھائی دینے لگے تھے۔۔ ایسے میں ٹنڈ منڈ درختوں پر ٹنگے جھاڑ جھنکار بے مکین گھونسلے بڑے آزردہ سے نظر آتے۔۔

" میں بھی کسی ایسے ہی درخت کی طرح ہوں۔۔۔" بڑی دلگرفتگی سے سوچتے ہوئے اس نے دو زانو کے گرد بازو لپیٹ کر پیشانی گھٹنوں پر ٹکا دی اور کونے میں ایستادہ ہار سنگھار کے درخت کو دیکھنے لگی، جس کی شاخوں سے جڑے پتوں کی رنگت ذرد پڑنے لگی تھی۔۔۔

"وہ وقت دور نہیں جب امید اور آس کے یہ باقی پتے بھی جھڑ جائیں گے، اور میں ہو بہو اس درخت کی طرح ہو جاؤں گی۔۔۔۔ خالی۔۔۔۔ بدنما اور۔۔۔۔ اور زندگی سے عاری۔۔۔" اس کی آنکھ میں ایک ننھا سا ستارہ ابھر آیا تھا۔۔۔۔

( آمنہ ریاض کے ناول" محبت زیست کا حاصل " سے اقتباس

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now
Sign in to follow this  

×

Important Information

We have placed cookies on your device to help make this website better. You can adjust your cookie settings, otherwise we'll assume you're okay to continue.