Jump to content
CooLYar Forums - A Friendly Community by CooLYar
shy

Soch...

Recommended Posts

رنجش ہی سہی ــ دِل ہی دُکھانے کے ليے آ
آ پھر سے مُجھے ــ چھوڑ کے جانے کے ليے آ
کچھ تو ميرے پندارِ محبت کا بھرم رکھ
تُو بھی تو مجھ کو ــ منانے کے ليے آ
پہلے سے مراسم نا سہی ـ ـ پھر بھی کبھی تو
رسمِ راہِ دُنيا ہی ــ نبھانے کے ليے آ
کس کس کو بتائيں گے ـ ـ جُدائی کا سبب ہم
تُو مجھ سے خفا ہے ــ تو زمانے کے ليے آ
اِک عُمر سے ہُوں ـ ـ لذّتِ گريہ سے بھی محروم
اے راحتِ جاں ــ مُجھ کو رُلانے کے ليے آ
اب تک دلِ خوش فہم کو ـ ـ تجھ سے ہيں اُميديں
يہ آخری شمعيں بھی ــ بُجھانے کے ليے آ

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Please don’t expect me to always be good and kind and loving.

There are times when I will be cold and thoughtless and hard to understand.
-Sylvia Plath

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Bohot Khoob....

nawazish..........

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

تِری بے رخی کے حِصار میں، غم زندگی کے فشار میں
میرا سارا وقت نکل گیا ، مِری بات بیچ میں رہ گئی

Share this post


Link to post
Share on other sites

Some days you will feel like the ocean.

Some days you will feel like you're drowning in it.

~Lora Math

Share this post


Link to post
Share on other sites

ﻭﺣﺸﺘﯿﮟ ﺑﮑﮭﺮﯼ ﭘﮍﯼ ﮨﯿﮟ ﺟﺲ ﻃﺮﻑ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﺅﮞ ﻣَﯿﮟ
ﮔﮭﻮﻡ ﭘﮭﺮ ﺁﯾﺎ ﮨُﻮﮞ ﺍﭘﻨﺎ ﺷﮩﺮ ﺗﯿﺮﺍ ﮔﺎﺅﮞ ﻣَﯿﮟ


ﮐﺲ ﮐﻮ ﺭﺍﺱ ﺁﯾﺎ ﮨﮯ ﺍﺗﻨﯽ ﺩﯾﺮ ﺗﮏ ﮐﺎ ﺟﺎﮔﻨﺎ
ﻭﮦ ﺟﻮ ﻣﻞ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺍُﺱ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﯾﮩﯽ ﺳﻤﺠﮭﺎﺅٔﮞ ﻣَﯿﮟ


ﺍﺏ ﺗﻮ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍُﺗﺮ ﺁﺋﯽ ﮨﯿﮟ ﺩِﻝ ﮐﯽ ﻭﺣﺸﺘﯿﮟ

ﺁﺋﯿﻨﮧ ﺩﯾﮑﮭﻮﮞ ﺗﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﺳﮯ ﮈﺭ ﺟﺎﺅﮞ ﻣَﯿﮟ


ﮐﭽﮫ ﺑﺘﺎ ﺍﮮ ﻣﺎﺗﻤﯽ ﺭﺍﺗﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﮬﻨﺪﻟﯽ ﭼﺎﻧﺪﻧﯽ
ﺑﮭﻮﻟﻨﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﺁﺧﺮ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﯾﺎﺩ ﺁﺅﮞ ﻣَﯿﮟ؟


ﺍﺏ ﮐﮩﺎﮞ ﻭﮦ ﺩِﻝ ﮐﮧ ﺻﺤﺮﺍ ﻣﯿﮟ ﺑﮩﻠﺘﺎ ﮨﯽ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ
ﺍﺏ ﺗﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﯽ ﺗﻨﮩﺎﺋﯽ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮔﮭﺒﺮﺍﺅﮞ ﻣَﯿﮟ


ﯾﺎﺩ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺗﯿﺮﮮ ﻟﻮﭦ ﺁﻧﮯ ﮐﮯ ﻭﻋﺪﻭﮞ ﮐﯽ ﮔﮭﮍﯼ
ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺍِﮎ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺑﭽﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﮩﻼﺅﮞ ﻣَﯿﮟ


ﻣﯿﺮﮮ ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﻧﮯ ﺗﺮﺍﺷﺎ ﺗﮭﺎ ﺗِﺮﺍ ﺍُﺟﻼ ﺑﺪﻥ
ﺁ ﺗﺠﮭﮯ ﺍﺏ ﻓﮑﺮ ﮐﯽ ﭘﻮﺷﺎﮎ ﺑﮭﯽ ﭘﮩﻨﺎﺅﮞ ﻣﯿﮟ


ﮐﺲ ﻟﯿﮯ ﻣﺤﺴﻦ ﮐﺴﯽ ﺑﮯ ﻣﮩﺮ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﮐﮩﻮﮞ
ﺩِﻝ ﮐﮯ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﭘﺘّﮭﺮ ﺳﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﭨﮑﺮﺍﺅﮞ ﻣﯿﮟ؟

Share this post


Link to post
Share on other sites

اب کے ہم بچھڑے تو شاید کبھی خوابوں میں ملیں
جس طرح سوکھے ہوئے پھول کتابوں میں ملیں

ڈھونڈ اُجڑے ہوئے لوگوں میں وفا کے موتی
یہ خزانے تجھے ممکن ہے خرابوں میں ملیں

غمِ دنیا بھی غمِ یار میں شامل کر لو
نشہ بڑھتا ہے شرابیں جو شرابوں میں ملیں

تُو خدا ہے نہ مرا عشق فرشتوں جیسا!
دونوں انساں ہیں تو کیوں اتنے حجابوں میں ملیں

آج ہم دار پہ کھینچے گئے جن باتوں پر
کیا عجب کل وہ زمانے کو نصابوں میں ملیں

اب نہ وہ میں نہ وہ تُو ہےنہ وہ ماضی ہے فرازؔ
جیسے دو شخص تمنّا کے سرابوں میں ملیں

Share this post


Link to post
Share on other sites

تجھ کو کس پھول کا کفن ہم دیں

تو جدا ایسے موسموں میں ہوا

جب درختوں کے ہاتھ خالی تھے

Share this post


Link to post
Share on other sites

‏بے حسی شرط ﮨﮯ جینے کے لئیے

اور ھم کو احساس کی بیماری ﮨﮯ.

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

.........................................

21761804_728268977365421_6672768649980321428_n.jpg

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

میرے دل کی کتاب میں . 
تحریر تم تفصیل سے ھو...

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺗﻮ ﻧﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﻗﺒﺮ ﺳﮯ ﮐﻢ ﺩﯼ ﮨﮯ ﺯﻣﯿﮟ

ﭘﺎﺅﮞ ﭘﮭﯿﻼﺅﮞ ﺗﻮ _____ﺩﯾﻮﺍﺭ ﻣﯿﮟ ﺳﺮ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ!

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Your life is nothing more than a love story between you and Allah.. Nothing more..

Every person, every experience, every loss, every gift, every pain is sent to your path for one reason and one reason only: to bring you back to Him

  • Like 1

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

×

Important Information

We have placed cookies on your device to help make this website better. You can adjust your cookie settings, otherwise we'll assume you're okay to continue.